caa protest k mutaliq general rawat ki modi hakumat par tanqeed

0
125

caa protest k mutaliq general rawat ki modi hakumat par tanqeed

caa protest k mutaliq general rawat ki modi hakumat par tanqeed    بھارت میں مسلمانوں کے خلاف متنازعہ قانون کے پاس ہونے کے بعد مختلف ریاستوں میں احتجاج جاری ہے اور مسلم اکثریت علاقوں میں  صورتحال ذیادہ کشیدہ ہو چکی ہے۔

اطلاعات کے مطابق مختلف ریاستوں میں پرتشدد ہونے والے احتجاج میں متعدد افراد کے ہلاک اور ایک بڑی تعداد کے زخمی ہونے

کی اطلاعات ہیں ۔

اس قانون کے خلاف بھات میں موجود سیاح بھی آواز اٹھا رہے ہیں ۔

جنرل پین راوت کا ٹویٹ

بھارت کو جہاں ہونے والے مختلف ریاستوں میں ہونے والے احتجاج کی وجہ سے کافی ذیادہ پریشانی کا سامنا ہے وہیں انڈیا کے آرمی چیف بین راوت کا شہریت کے قانون کے خلاف بیان نے حکومت کی مشکل میں مزید اضافہ کر دیا ہے ۔

جنرل بپن راوت نے اپنے بیان میں کہا ہے کہ :

لیڈر وہ نہیں ہوتے جو لوگوں کی غلط سمت میں راہنمائی کرتے ہیں ۔ اور انہوں نے کہا کہ جس طرح یونیورسٹیوں اور کالجوں کے

طلبا پرتشدد احتجاج اور آتش زدگی کے واقعات میں عام عوام کی قیادت کررہے ہیں یہ قیادت نہیں ہے ۔

جنرل  بپن راوت کا ٹویٹ دیکھنے کے لیے نیچے لنک پر کلک کریں

https://twitter.com/ANI/status/1210083310547849216?ref_src=twsrc%5Etfw%7Ctwcamp%5Etweetembed%7Ctwterm%5E1210083310547849216&ref_url=https%3A%2F%2Fwww.bbc.com%2Furdu%2Fregional-50920044

لیکن ان کے اس بیان کی وجہ سے انکو بہت تنقید کا سامنا کر پڑرہا ہے ۔ 

کمیونسٹ پارٹی سی پی آئی ایم کے جنزل سیکٹرری سیتا رام پچوری نے مذمت کرتے ہوئے کہا کہ :۔

جنرل راوات کا بیان واضح کرتاہے کہ مودی حکو مت میں حالات اتنے خراب ہوگئے ہیں کہ فوج کے سربراہ اپنے عہدے کی حدود پار کرنے لگا ہے ۔

اور کہا کہ ایسے حالات میں سوال لازمی ہوگا کہ ہم فوج کو سیاست کی بیھنٹ چڑھا کہ پاکستان کے راستے پر تو نہیں چل پڑے ۔

جنرل راوت کے اس بیان کو لے کر سیاسی جماعت اے آئی ایم آئی کے رہنما اسدالدین  اویسی نے بھی اپنی ٹویٹ میں جنرل بپن راوت کو تنقید کا نشانہ بنایا

جنرل بین راوت آرمی چیف کے عہدے پر 31 دسمبر 2016 سے فائز ہیں ۔

اس سے پہلے آرمی چیف نے 2 سال اور 152 دن خدمات سرانجام دیں ۔

کمانڈر ان چیف کے عہدے کو 1748 میں متعارف کروایا گیا تھا ۔

1955 میں کمانڈر ان چیف کی جگہ چیف آف آرمی سٹاف استعمال ہونے لگا۔

راہنما اسد الدین اویسی نے اپنے ٹویٹ میں کہا:۔

اپنے عہدے کی حدوں کا علم ہی لیڈر شپ ہوتی ہے۔سویلین بالادستی اور ادارے کے وقار کا احساس کرنا آپکی ذمہ داری ہے ۔

 راہنما سعید الدین کا ٹویٹ پڑھنے کےلیے نیچے کلک کریں

https://twitter.com/asadowaisi/status/1210100936284102656

جبکہ پریس کانفرس میں کہا کہ جنرل راوت کا بیان حکومت کی کمزوری کا باعث بن رہا ہے ۔

پریس کانفرس میں مزید کہا کہ  اگر فوج کی سرابرہ کی بات سچ مانی جائے تو میرا سوال ہے کہ

وزیر اعظم مودی نے اپنی ویب سائیٹ پر لکھا ہے کہ ماضی میں انڈیا میں ایمرجنسی کے خلاف ہونے احتجاج میں وہ  شامل تھے ۔فوج کے بیان کے مطابق یہ کام غلط تھا ۔

تاہم مودی حکومت کے ایک وزیر رام داس اٹھاولے  جنرل راوت کے حق میں سامنے آئے ہیں ۔

حکومتی وزیر نے  جنرل راوت کے بیان کی حمایت کرتے ہوئے کہا کہ کہ فوج کے سربراہ کا کہنا درست ہے کہ سیاسی لیڈروں کو اپنے ساتھ چلنے والوں کا پرتشدد راستہ نہیں اپنانے دینا چاہیے ۔

انکا مزید کہنا تھاکہ پارٹی کو صیح سمت کی طرف لے کے جانا چاہیے ۔

اور لوگوں سے کہا کہ پرامن طریقے سے مئوقف سامنے رکھیں تاکہ پریشانی نہ ہو۔

پاکستانی سرکاری افسران کا موبائل کا ڈیٹا چوری تفصیل کے لیے نچے لنک پر کلک کریں

https://www.7knows.com/article/1312/pakistani-sarkari-afsran-ka-data-chori-israiel-mulawas-%d8%b3%d8%b1%da%a9%d8%a7%d8%b1%db%8c-%d8%a7%d9%81%d8%b3%d8%b1%d8%a7%d9%86-%da%a9%d8%a7-%da%88%db%8c%d9%b9%d8%a7-%da%86%d9%88%d8%b1%db%8c/

یمن میں سکول کی طالبہ  سکول میں دستی بم لے آیٗ تفصیل کے لیےنیچے لنک پر کلک کریں

https://www.7knows.com/article/1341/yamni-student-use-hand-grenade/

 

 

جواب چھوڑ دیں

براہ مہربانی اپنی رائے درج کریں!
اپنا نام یہاں درج کریں